Ce diaporama a bien été signalé.
Le téléchargement de votre SlideShare est en cours. ×

آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟

Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Publicité
Chargement dans…3
×

Consultez-les par la suite

1 sur 3 Publicité

آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟

Télécharger pour lire hors ligne

آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟
انصر رضا
دنیا کی تمام زبانوں میں ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے والے کے لئے جو لفظ استعمال کیا جاتا ہے وہ اس لفظ سے مختلف ہوتا ہے جو اُس دوسری جگہ جاکر دوبارہ پہلی جگہ آنے والے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔اگر ایک شخص نقطہ الف سے نقطہ ب تک سفر کرے تواُردو زبان میں اسے ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے والا کہتے ہیں۔لیکن اگر وہی شخص نقطہ الف سے نقطہ ب تک پہنچ کر دوبارہ نقطہ الف تک آئے تو اسے ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے والا نہیں بلکہ واپس آنے والا کہتے ہیں۔ اسی طرح عربی زبان میں ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے کو ’’نزول ‘‘ جبکہ دوسرے مقام سے لوٹ کر پہلے مقام تک آنے کو ’’رجوع ‘‘ کہتے ہیں۔حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے متعلق یہ عقیدہ رکھا جاتا ہے کہ وہ زمین سے آسمان پر تشریف لے گئے ہیں اور اب قُربِ قیامت میں آسمان سے زمین پر تشریف لائیں گے۔ زبان و بیان کے مذکورہ بالا قواعد کی رُو سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی آسمان سے زمین پر آمد کو اُردو زبان میں ’’واپسی‘‘ اور عربی زبان میں ’’رجوع ‘‘ کے لفظ سے ظاہر کیا جانا چاہئےتھا۔ لیکن اس کے برعکس احادیثِ نبوی میں جس جگہ بھی مسیؑح ابن مریم ؑ کی قربِ قیامت میں آمد کی خبر دی گئی ہے وہاں ’’رجوع ‘‘ کی بجائے ’’نزول ‘‘ کا لفظ استعمال کیا گیا ہے حالانکہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے زمین پر محض آ نہیں رہے بلکہ واپس آرہے ہیں کیونکہ وہ آسمان پر زمین سے ہی گئے تھے۔
ایک مقام سے دوسرے مقام پر جاکر پھر اُسی مقام پر آنے کو رجوع یعنی واپسی کہنے کے قاعدہ کا ثبوت یوں تو عربی، اردو، انگریزی اور دیگر زبانوں کی لاتعداد مثالوں سے دیا جاسکتا ہے لیکن اسی نوعیت کی ایک مثال سے یہ بات نہ صرف زبان و بیان کے قواعد اور اُن کے استعمال بلکہ دینی پہلو سے بھی پایۂ ثبوت کو پہنچ جاتی ہے،جیسا کہ حضرت عمرؓ کے مندرجہ ذیل بیان سے ظاہر ہے کہ وہ رسول اللہ ﷺ کی وفات پر یہ نہیں کہہ رہے کہ رسول اللہ ﷺ موسیٰ علیہ السلام کی طرح اپنے رب

آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟
انصر رضا
دنیا کی تمام زبانوں میں ایک جگہ سے دوسری جگہ جانے والے کے لئے جو لفظ استعمال کیا جاتا ہے وہ اس لفظ سے مختلف ہوتا ہے جو اُس دوسری جگہ جاکر دوبارہ پہلی جگہ آنے والے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔اگر ایک شخص نقطہ الف سے نقطہ ب تک سفر کرے تواُردو زبان میں اسے ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے والا کہتے ہیں۔لیکن اگر وہی شخص نقطہ الف سے نقطہ ب تک پہنچ کر دوبارہ نقطہ الف تک آئے تو اسے ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے والا نہیں بلکہ واپس آنے والا کہتے ہیں۔ اسی طرح عربی زبان میں ایک مقام سے دوسرے مقام تک جانے کو ’’نزول ‘‘ جبکہ دوسرے مقام سے لوٹ کر پہلے مقام تک آنے کو ’’رجوع ‘‘ کہتے ہیں۔حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے متعلق یہ عقیدہ رکھا جاتا ہے کہ وہ زمین سے آسمان پر تشریف لے گئے ہیں اور اب قُربِ قیامت میں آسمان سے زمین پر تشریف لائیں گے۔ زبان و بیان کے مذکورہ بالا قواعد کی رُو سے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی آسمان سے زمین پر آمد کو اُردو زبان میں ’’واپسی‘‘ اور عربی زبان میں ’’رجوع ‘‘ کے لفظ سے ظاہر کیا جانا چاہئےتھا۔ لیکن اس کے برعکس احادیثِ نبوی میں جس جگہ بھی مسیؑح ابن مریم ؑ کی قربِ قیامت میں آمد کی خبر دی گئی ہے وہاں ’’رجوع ‘‘ کی بجائے ’’نزول ‘‘ کا لفظ استعمال کیا گیا ہے حالانکہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے زمین پر محض آ نہیں رہے بلکہ واپس آرہے ہیں کیونکہ وہ آسمان پر زمین سے ہی گئے تھے۔
ایک مقام سے دوسرے مقام پر جاکر پھر اُسی مقام پر آنے کو رجوع یعنی واپسی کہنے کے قاعدہ کا ثبوت یوں تو عربی، اردو، انگریزی اور دیگر زبانوں کی لاتعداد مثالوں سے دیا جاسکتا ہے لیکن اسی نوعیت کی ایک مثال سے یہ بات نہ صرف زبان و بیان کے قواعد اور اُن کے استعمال بلکہ دینی پہلو سے بھی پایۂ ثبوت کو پہنچ جاتی ہے،جیسا کہ حضرت عمرؓ کے مندرجہ ذیل بیان سے ظاہر ہے کہ وہ رسول اللہ ﷺ کی وفات پر یہ نہیں کہہ رہے کہ رسول اللہ ﷺ موسیٰ علیہ السلام کی طرح اپنے رب

Publicité
Publicité

Plus De Contenu Connexe

Diaporamas pour vous (20)

Les utilisateurs ont également aimé (19)

Publicité

Similaire à آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟ (20)

Plus par muzaffertahir9 (20)

Publicité

آمدِ مسیح موعود ء ۔ نزول یا رجوع؟

  1. 1. ِ‫د‬‫م‬‫آ‬‫وموعد‬‫حیسم‬ِ‫ء‬ ِ‫روجع؟‬‫ای‬‫زنول‬‫۔‬ ‫راض‬‫ارصن‬ِ ‫اج‬‫ایک‬‫اامعتسل‬‫ظفل‬‫وج‬‫ےئل‬‫ےک‬‫واےل‬‫اجےن‬‫ہگج‬‫دورسی‬‫ےس‬‫ہگج‬‫اکی‬‫ںیم‬‫زابونں‬‫امتم‬‫یک‬‫داین‬‫ظفل‬ ‫ا‬ ‫و‬‫ ے‬‫ ات‬ ‫ ے۔ارگ‬‫وہ ات‬‫اامعتسل‬‫ےئل‬‫ےک‬‫واےل‬‫آےن‬‫ہگج‬‫یلہپ‬ ‫دوابر‬‫اجرک‬‫ہگج‬‫دورسی‬ ُ‫ا‬‫وج‬‫ ے‬‫وہ ات‬‫فلتخم‬‫ےس‬‫صخ‬‫اکی‬ ‫ہطقن‬‫ےس‬‫افل‬‫ہطقن‬‫اجےن‬‫کت‬‫اقمم‬‫دورسے‬‫ےس‬‫اقمم‬‫اکی‬‫اےس‬‫ںیم‬‫زابن‬‫ُردو‬‫ا‬‫وت‬‫رکے‬‫رفس‬‫کت‬‫ب‬‫ےتہک‬‫واال‬ ‫اقم‬‫اکی‬‫اےس‬‫وت‬‫آےئ‬‫کت‬‫افل‬‫ہطقن‬ ‫دوابر‬‫رک‬‫چنہپ‬‫کت‬‫ب‬‫ہطقن‬‫ےس‬‫افل‬‫ہطقن‬‫صخ‬‫ویہ‬‫ارگ‬‫ںیہ۔نکیل‬‫ےس‬‫م‬ ‫اقم‬‫اکی‬‫ںیم‬‫زابن‬‫رعیب‬‫رطح‬‫ایس‬‫ںیہ۔‬‫ےتہک‬‫واال‬‫آےن‬‫واسپ‬‫ہکلب‬‫ںیہن‬‫واال‬‫اجےن‬‫کت‬‫اقمم‬‫دورسے‬‫م‬‫ےس‬ ‫وک‬‫اجےن‬‫کت‬‫اقمم‬‫دورسے‬’’‫زنول‬ِ‘‘‫وک‬‫آےن‬‫کت‬‫اقمم‬‫ےلہپ‬‫رک‬‫ولٹ‬‫ےس‬‫اقمم‬‫دورسے‬‫ہکبج‬’’‫روجع‬ِ‘‘‫ےتہک‬ ‫ےل‬‫رشتفی‬‫رپ‬‫آامسن‬‫ےس‬‫زنیم‬ ‫و‬‫ہک‬‫ ے‬‫اج ات‬‫راھک‬ ‫دیقع‬‫ہی‬‫قلعتم‬‫ےک‬‫االسلم‬‫ہیلع‬‫ٰیسیع‬‫ںیہ۔رضحت‬‫اور‬‫ںیہ‬‫ ےئ‬ ‫زابن‬‫ےگ۔‬‫الںیئ‬‫رشتفی‬‫رپ‬‫زنیم‬‫ےس‬‫آامسن‬‫ںیم‬‫ایقتم‬ ‫د‬‫رُقب‬‫اب‬‫ذم‬‫ےک‬‫ایبن‬‫و‬‫رضحت‬‫ےس‬‫و‬ُ‫ر‬‫یک‬‫اوا د‬‫ابال‬ ‫وکر‬ ‫ںیم‬‫زابن‬‫ُردو‬‫ا‬‫وک‬‫آم‬‫رپ‬‫زنیم‬‫ےس‬‫آامسن‬‫یک‬‫االسلم‬‫ہیلع‬‫ٰیسیع‬’’‫وایسپ‬ِ‘‘‫رعیب‬‫اور‬‫ںیم‬‫زابن‬’’‫روجع‬ِ‘‘‫ےس‬‫ظفل‬‫ےک‬ ‫رق‬‫یک‬ؑ‫رممی‬‫انب‬‫ح‬ؑ‫سی‬‫م‬ ‫یھب‬‫ہگج‬‫سج‬‫ںیم‬‫وبنی‬‫د‬‫ثی‬‫ااحد‬‫ربسکع‬‫ےک‬ ‫ا‬‫نکیل‬‫اچےئہاھت۔‬‫اجان‬‫ایک‬‫اظرہ‬‫ںیم‬‫ایقتم‬ ‫د‬‫ب‬ ‫واہں‬‫ ے‬‫یئگ‬‫دی‬‫ربخ‬‫یک‬‫آم‬’’‫روجع‬ِ‘‘‫اجبےئ‬‫یک‬’’‫زنول‬ِ‘‘‫ ے‬‫ایگ‬‫ایک‬‫اامعتسل‬‫ظفل‬‫اک‬‫االسلم‬‫ہیلع‬‫ٰیسیع‬‫رضحت‬‫احالہکن‬ ‫ےھت‬‫ ےئ‬‫یہ‬‫ےس‬‫زنیم‬‫رپ‬‫آامسن‬ ‫و‬‫ویکہکن‬‫ںیہ‬‫آر ے‬‫واسپ‬‫ہکلب‬‫ر ے‬‫ںیہن‬‫آ‬‫ضحم‬‫رپ‬‫زنیم‬‫ےس‬‫آامسن‬‫۔‬ِ ‫وک‬‫آےن‬‫رپ‬‫اقمم‬‫ُیس‬‫ا‬‫رھپ‬‫اجرک‬‫رپ‬‫اقمم‬‫دورسے‬‫ےس‬‫اقمم‬‫اکی‬‫وایسپ‬‫ینعی‬‫روجع‬‫وت‬‫ویں‬‫وبثت‬‫اک‬ ‫اق د‬‫ےک‬‫ےنہک‬ ‫اکی‬‫یک‬‫ونتیع‬‫ایس‬‫نکیل‬‫ ے‬‫اجاتکس‬‫دای‬‫ےس‬‫اثمولں‬‫الدعتاد‬‫یک‬‫زابونں‬‫درگی‬‫اور‬‫ارگنزیی‬،‫اردو‬،‫رعیب‬‫ہی‬‫ےس‬‫اثمل‬ ‫چنہپ‬‫وک‬‫وبثت‬ٔ‫ہی‬‫اپ‬‫یھب‬‫ےس‬‫ولہپ‬‫دینی‬‫ہکلب‬‫اامعتسل‬‫ےک‬‫ُن‬‫ا‬‫اور‬‫اوا د‬‫ےک‬‫ایبن‬‫و‬‫زابن‬‫رصف‬‫ہن‬‫ابت‬‫ہک‬‫ ے، ا‬‫اجےہ‬ ‫اہلل‬‫روسل‬ ‫و‬‫ہک‬‫ ے‬‫اظرہ‬‫ےس‬‫ایبن‬‫ذلی‬‫دنمرہج‬‫ےک‬ؓ‫رمع‬‫رضحت‬ِ‫ﷺ‬‫ںیہن‬‫ہی‬‫رپ‬‫وافت‬‫یک‬‫روسل‬‫ہک‬‫ر ے‬ ‫ہر‬
  2. 2. ‫اہلل‬ِ‫ﷺ‬ ‫ہر‬‫ہی‬‫ہکلب‬‫ےگ‬‫وہں‬‫انزل‬‫رھپ‬‫اور‬‫ںیہ‬‫ ےئ‬‫ےنلم‬‫ےس‬‫رب‬‫اےنپ‬‫رطح‬‫یک‬‫االسلم‬‫ہیلع‬‫ومٰیس‬‫ہک‬‫ںیہ‬‫ر ے‬ ‫اہلل‬‫روسل‬ِ‫ﷺ‬‫االسل‬‫ہیلع‬‫ومٰیس‬‫رضحت‬‫رطح‬‫سج‬‫ےگ‬‫آںیئ‬‫واسپ‬‫رطح‬‫ُیس‬‫ا‬‫آ‬‫واسپ‬‫م‬:‫ےھت‬‫ےئ‬ِ ’’‫ّٰہ‬‫ل‬‫ال‬ ‫رسول‬ ‫أن‬ ‫یزعمون‬ ‫المنافقین‬ ‫من‬ ‫رجاال‬ ‫ان‬‫ﷺ‬‫ان‬ ‫و‬ ،‫توفي‬ ‫قد‬ ‫غاب‬ ‫فقد‬ ،‫عمران‬ ‫بن‬ ‫موسی‬ ‫ذھب‬ ‫کما‬ ‫ربہ‬ ‫الی‬ ‫ذھب‬ ‫ولکنہ‬ ،‫مات‬ ‫ما‬ ‫ّٰہ‬‫ل‬‫ال‬ ‫رسول‬ ‫رسول‬ ‫لیرجعن‬ ‫ّٰہ‬‫ل‬‫ووال‬ ،‫مات‬ ‫قیل‬ ‫أن‬ ‫بعد‬ ‫الیھم‬ ‫رجع‬ ‫ثم‬ ،‫لیلۃ‬ ‫أربعین‬ ‫قومہ‬ ‫عن‬ ‫ّٰہ‬‫ل‬‫ال‬‫ﷺ‬‫رج‬ ‫أیدي‬ ‫فلیقطعن‬ ،‫موسی‬ ‫رجع‬ ‫کما‬‫رسول‬ ‫أن‬ ‫زعموا‬ ‫أرجلھم‬ ‫و‬ ‫ال‬ ‫ّٰہ‬‫ل‬‫ال‬‫ﷺ‬‫مات۔‬(‘‘‫جلد‬ ‫ٰق‬‫ح‬‫أس‬ ‫ألبن‬ ‫النبویۃ‬ ‫السیرۃ‬1-2‫ص۔‬ ،713‫النبویہ‬ ‫السیرۃ‬ ، ‫جلد۔‬ ‫ّام‬‫ش‬‫ہ‬ ‫ألبن‬4‫ص۔‬ ،306)ِ ‫اہلل‬‫روسل‬‫ہک‬‫ںیہ‬‫رکر ے‬ٰ‫دوعی‬‫ہی‬‫ولگ‬‫ھچک‬‫ےس‬‫ںیم‬‫انموقفں‬ِ‫ﷺ‬‫وہ ےئ‬‫وفت‬‫رمے‬ ‫و‬‫ںیہ۔احالہکن‬ ‫ےس‬‫اوم‬‫اینپ‬ ‫و‬‫ےھت۔سپ‬‫ ےئ‬‫رمعان‬‫نب‬‫ومٰیس‬‫ہک‬‫ ا‬‫ںیہ‬‫ ےئ‬‫رطف‬‫یک‬‫رب‬‫اےنپ‬ ‫و‬‫ہکلب‬‫ںیہن‬‫راںیت‬‫اچسیل‬ ‫مسق‬‫یک‬‫اہلل‬‫ےھت۔‬‫رمے‬‫دعب‬‫ےک‬ ‫ا‬‫رھپ‬‫ےھت‬‫آ ےئ‬‫واسپ‬‫رطف‬‫یک‬‫ان‬‫رھپ‬‫ےھت‬‫ر ے‬‫اغبئ‬‫اہلل‬‫روسل‬ِ‫ﷺ‬‫یھب‬ ‫ہی‬‫وج‬‫ےگ‬‫اکںیٹ‬‫اپؤں‬‫اہھت‬‫ےک‬‫ولوگں‬‫ان‬‫رضور‬‫ےھت۔اور‬‫آےئ‬‫واسپ‬‫ومٰیس‬‫رطح‬‫سج‬‫ےگ‬‫آںیئ‬‫واسپ‬‫رضور‬‫ےتہک‬ ‫ںیہ۔‬‫رم ےئ‬‫اہلل‬‫روسل‬‫ہک‬‫ںیہ‬ِ (‫ ے‬‫رفام ات‬‫ںیم‬‫رکمی‬ ‫د‬‫رقآن‬‫اعتٰیل‬‫اہلل‬ِ َ‫ی‬ ْ‫م‬ُ‫ھ‬ َِّ‫ل‬َ‫ع‬َ‫ل‬ ‫د‬ ‫ت‬ ٰ‫ی‬ ٰ‫ا‬ ْ‫ال‬ ُ‫ف‬ِّ‫د‬‫ر‬ َ ُ‫ن‬ َ‫ف‬ْ‫ی‬َ‫ک‬ْ‫ر‬ ُ ‫ظ‬ ْ‫ُن‬‫ا‬َِ‫ن‬ْ‫ن‬ََُُْْ‫ْف‬ ِ‫سک‬‫مہ‬‫(دھکی‬) ‫اجںیئ۔االاعنم۔‬‫ھجمس‬‫رطح‬‫یسک‬ ‫و‬‫ اتہک‬‫ںیہ‬‫رکےت‬‫رکایبن‬‫ریھپ‬‫ریھپ‬‫وک‬‫اشنانت‬‫رطح‬6:66‫حیسم‬‫رضحت‬‫دّیسان‬‫)۔‬ ‫ایبن‬‫رک‬‫وھکل‬‫وھکل‬‫ےس‬‫ولہپؤں‬‫فلتخم‬‫ہلئسم‬‫اک‬‫ح‬ؑ‫سی‬‫م‬ ‫د‬‫وافت‬‫یھب‬‫ےن‬‫واالسلم‬‫اٰولصلۃ‬‫ہیلع‬‫وموعد‬‫رطح‬‫یسک‬‫ اتہک‬‫رفامای‬ ‫ایب‬‫اورپ‬‫ہک‬‫اجںیئ۔ ا‬‫ھجمس‬‫اےس‬‫ولگ‬‫ہگج‬‫یسک‬‫ںیم‬‫اچل‬‫لول‬‫اناس ی‬،‫ ے‬‫ایگ‬‫ایک‬‫ن‬‫واسپ‬‫ےس‬‫واہں‬‫رھپ‬‫اور‬‫اجےن‬ ‫ا‬‫ہیلع‬‫ٰیسیع‬‫رضحت‬‫ےن‬ؑ‫وضحر‬‫ںیم‬‫روینش‬‫یک‬‫ُن‬‫ا‬،‫ںیہ‬‫اجےت‬‫ےئک‬‫اامعتسل‬‫اافلظ‬‫وج‬‫ےئل‬‫ےک‬‫آےن‬‫وک‬‫وافت‬‫یک‬‫السلم‬ :‫ ے‬‫رفامای‬‫اثتب‬‫رطح‬ ‫ا‬ِ
  3. 3. ’’‫روُج‬‫اور‬‫ ے‬‫زنول‬ ‫و‬‫ ے‬‫آای‬‫ظفل‬‫وج‬‫واےطس‬‫ےک‬‫آم‬‫یک‬‫ح‬ؑ‫سی‬‫م‬ ‫رضحت‬‫ا‬‫ ے۔‬‫ںیہن‬‫ع‬‫یک‬‫واےل‬‫آےن‬‫واسپ‬‫وت‬‫ل‬ِّ‫و‬ ‫زن‬‫ایگ۔دوم‬‫لوال‬‫ںیہن‬‫ںیہک‬‫تبسن‬‫یک‬ؑ‫ی‬ٰ‫س‬‫عی‬‫رضحت‬‫ظفل‬‫اک‬‫روُجع‬‫اور‬‫ ے‬‫روُجع‬ ‫و‬‫ ے‬‫آ ات‬‫ظفل‬‫وج‬‫تبسن‬‫ی‬‫ن‬‫م‬‫ےک‬‫ول‬ ‫ںیہ۔‬‫ےتہک‬‫وک‬‫اسمرف‬‫زنلی‬‫ںیہ۔‬‫ںیہن‬‫ےک‬‫آےن‬‫ےس‬‫آامسن‬ِ‘‘‫ص‬‫اول‬‫دلج‬‫(وفلماظت‬:۵‫ااشتع‬‫ اترخی‬‫۔‬20 ‫اتسگ‬1960)‫ء؁‬ِ ‫رپ‬‫اقمم‬‫اور‬‫اکی‬:‫ںیہ‬‫رفامےت‬‫یرح ر‬‫واالسلم‬‫اٰولصلۃ‬‫ہیلع‬‫وموعد‬‫حیسم‬‫رضحت‬‫دّیسان‬ِ ’’‫تجدون‬ ‫وال‬ ‫ّماء؟‬‫س‬‫ال‬ ‫ِن‬‫م‬ ‫األرض‬ ‫الی‬ ‫سیرجع‬ ‫مریم‬ ‫ابن‬ ‫المسیح‬ َّ‫ن‬‫أ‬ ‫أتظنون‬ ‫ِتون‬‫ح‬‫تن‬ ‫أو‬ ‫بھذا‬ ‫ْتم‬‫م‬ِ‫ھ‬ْ‫ل‬ُ‫أ‬ َ‫أ‬ ‫األنبیاء۔‬ ‫أفضل‬ ‫و‬ ‫الرسل‬ ‫ّد‬‫ی‬‫س‬ ِ‫م‬ِ‫ل‬َ‫ک‬ ‫فی‬ ‫الرجوع‬ ‫لفظ‬ ِ‫م‬َ‫و‬ ‫َائینین؟‬‫خ‬‫َال‬‫ک‬ ‫ِکم‬‫س‬‫أنف‬ ‫عند‬ ‫ِن‬‫م‬ ‫الرجوع‬ ‫لفظ‬‫اللفظ‬ ‫ُو‬‫ھ‬ ‫ٰذا‬‫ھ‬ ‫أن‬ ‫ُوم‬‫ل‬‫َع‬‫م‬ْ‫ل‬‫ا‬ َ‫ن‬ ‫فھذا‬ ،‫االیاب‬ ‫الی‬ ‫َّفر‬‫س‬‫ال‬ ‫ّہ‬‫ج‬‫یتو‬ ‫و‬ ‫َّھاب۔‬‫ذ‬‫ال‬ ‫ْد‬‫ع‬َ‫ب‬ ‫یأتی‬ ‫ُل‬‫ج‬َ‫ر‬‫ل‬ ‫ُستعمل‬‫ی‬ ‫الذی‬ ‫َاص‬‫خ‬‫ال‬ ‫لفظ‬ ‫ْمل‬‫ع‬َ‫ت‬ْ‫س‬َ‫ی‬ ‫و‬ ‫الرجوع‬ ‫لفظ‬ ‫ٰھنا‬‫ھ‬ ‫یترک‬ ‫أن‬ ‫األنبیاء‬ ‫امام‬ ‫و‬ ِ‫ق‬‫َل‬‫خ‬ْ‫ل‬‫ا‬ ِ‫غ‬َ‫ل‬‫أب‬ ‫ِن‬‫م‬ ُ‫د‬‫أبع‬ ‫والبلغاء‬ ‫کالفصحاء‬ ‫یتکلم‬ ‫وال‬ ‫النزول‬(‘‘‫زخ‬‫رواح ی‬،‫ادمح‬‫وتکمب‬‫دلج۔‬‫ا ن‬11‫ص۔‬،150,151)ِ ‫دّیس‬‫احالہکن‬‫ےگ؟‬‫آںیئ‬‫واسپ‬‫رپ‬‫زنیم‬‫ےس‬‫آامسن‬‫رممی‬‫انب‬‫ح‬ؑ‫سی‬‫م‬‫ل‬ ‫ا‬‫ہک‬‫وہ‬‫رکےت‬‫امگن‬‫ہی‬‫مت‬‫ایک‬‫ال‬‫اور‬‫ا‬ ؐ‫الس‬ ‫وا‬‫رکےن‬‫ایختن‬‫ای‬‫ ے‬‫وہا‬‫ااہلم‬‫ہی‬‫ںیہمت‬‫ایک‬‫اج ات۔‬‫ںیہن‬‫یہ‬‫اپای‬‫ظفل‬‫اک‬‫روجع‬‫ںیم‬‫الکم‬‫ےک‬‫ا‬‫االایبنء‬‫ےن‬‫مت‬‫رطح‬‫یک‬‫ولں‬ ‫وک‬‫روجع‬‫ظفل‬ ‫ا‬‫صخ‬ ُ‫ا‬‫رپ‬‫وطر‬‫اخص‬‫ظفل‬‫ہی‬‫ہک‬‫اچےئہ‬‫وہان‬‫ولعمم‬‫اور‬‫ ے؟‬‫ایل‬‫ڑھگ‬‫ےس‬‫سفن‬‫اےنپ‬‫اامعتسل‬‫ےئل‬‫ےک‬ ‫او‬‫صخ‬‫غیلب‬‫و‬‫حیصف‬‫ےس‬‫بس‬‫ںیم‬‫ولخماقت‬‫امتم‬‫ہی‬‫سپ‬‫آےئ۔‬‫واسپ‬‫دعب‬‫ےک‬‫رفس‬‫وج‬‫ ے‬‫اج ات‬‫ایک‬‫دیعب‬‫ےس‬‫ا‬‫االایبنء‬‫اامم‬‫ر‬ ‫رکںی‬‫اامعتسل‬‫ظفل‬‫اک‬‫زنول‬‫رکےک‬‫رتک‬‫ظفل‬‫اک‬‫روجع‬ ‫و‬‫ہک‬‫ ے‬‫رتنی‬‫حیصف‬‫اور‬‫رکںی۔‬‫ہن‬‫الکم‬‫رطح‬‫یک‬‫ولوگں‬‫غیلب‬‫و‬ِ ‫ولہپ‬ ‫ا‬‫ےک‬‫ایبن‬‫و‬‫زابن‬‫اسھت‬‫ےک‬‫اجت‬‫وحاہل‬‫ےس‬‫تہب‬‫ےک‬‫فلخ‬‫و‬‫فلس‬‫املعےئ‬‫اور‬‫دحثی‬‫و‬‫رقآن‬‫یھب‬‫ےس‬ ‫ارگ‬‫ویکہکن‬‫ےگ‬‫الںیئ‬‫ںیہن‬‫رشتفی‬ ‫دوابر‬‫رپ‬‫زنیم‬ ‫ا‬‫االسلم‬‫ہیلع‬‫ٰیسیع‬‫رضحت‬‫ہک‬‫وہایگ‬‫اثتب‬‫ہی‬‫ان‬‫وت‬‫وہ ات‬‫وہان‬‫ا اس‬ ‫ےئل‬‫ےک‬’’‫زن‬‫ول‬ِ‘‘‫اجبےئ‬‫یک‬’’‫روجع‬ِ‘‘‫اج ات۔‬‫ایک‬‫اامعتسل‬‫ظفل‬‫اک‬ِ

×